Skip to main content

خواتین اور بچوں کی شہادت، آخر کب تک؟ Date: 2020-04-11 خواتین اور بچوں کی شہادت، آخر کب تک؟ آج کی بات گزشتہ روز صوبہ قندھار کے ضلع دامان کے گاؤں خوشاب میں قابض امریکی فوج نے نہتے شہریوں پر ڈرون حملہ کیا، مقامی لوگوں کے مطابق اس حملے میں 11 شہری، جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے شامل تھے ، شہید اور زخمی ہوگئے ۔ امارت اسلامیہ اور امریکہ کے مابین 29 فروری کو ہونے والے معاہدے میں لکھا گیا ہے کہ امریکہ ، غیر ملکی اتحادی اور کابل انتظامیہ بمباری نہیں کریں گے، ڈرون حملے، بھاری توپخانے اور طویل فاصلے تک مار کرنے والے میزائل حملے نہیں کریں لیکن معاہدے کے بعد اب تک امریکہ اور کابل انتظامیہ نے ملک کے مختلف علاقوں میں سویلین اہداف کو نشانہ بنایا اور عام شہریوں کو بھاری نقصان پہنچایا ۔ گزشتہ ماہ کے دوران بھی حملہ آوروں اور کابل انتظامیہ کے حملوں میں قندوز ، بغلان ، روزگان ، پکتیکا ، ہلمند ، غزنی ، زابل ، فاریاب اور بدخشان میں متعدد شہری شہید اور زخمی ہوئے اور ان کے گھر تباہ ہوگئے، جب کہ رواں ماہ کے دوران بھی حملہ آوروں اور کابل انتظامیہ کی جانب سے مظلوم اور نہتے شہریوں پر ظلم و ستم کا سلسلہ جاری ہے ۔ امارت اسلامیہ شہریوں کے خلاف آپریشن اور حملوں کی شدید مذمت کرتی ہے اور اپنے پیارے اور مظلوم عوام کے نقصان اور املاک کی تباہی کو برداشت نہیں کرتی ہے ۔ ہم مظلوم قوم پر ظلم و ستم کے خاتمے ، پائیدار امن کے سائے میں جینے اور مجاہد عوام کی امنگوں کے مطابق ایک جامع اسلامی نظام کی تشکیل کے لئے تمام ممکنہ طریقوں سے کوشش کررہے ہیں ۔ امریکہ کو افغان عوام کے خلاف جاری جنگ ، بمباری اور ڈرون حملوں کو فوری طور پر روکنا چاہئے، امارت اسلامیہ کے ساتھ کئے گئے معاہدے پر عمل درآمد کو یقینی بنانا چاہیے اور امن کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنا چاہئے ۔

Item Preview

This item is only available to logged in Internet Archive users

Log in
Create an Internet Archive account

0 Views

Log in to view this item

Uploaded by sahabhakim9 on

SIMILAR ITEMS (based on metadata)